March 9, 2018,National News

چیئرمین سینٹ کیلئے پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے درمیان سخت مقابلہ متوقع ،اہم سیاسی جماعت کے سربراہ فیورٹ بن گئے، متعدد سیاسی جماعتوں کی حمایت حاصل ہوگئی

Women from all walks of life will be mobilising to highlight a diverse range of issues they face and call for economic justice, reproductive justice and environmental justice. Men are also welcome, as long as each is accompanied by two women.What makes it unique is the fact that it is a collective effort and not spearheaded by any one entity; the flyer distributed by Hum Auratein (We Women) doesn't mention any organisation so it's completely a citizen-led effort, being funded by small contributions from individuals.I've worked with women in squatter settlements in Karachi and it's heartbreaking to see the struggles they go through. Even getting an ID card is a herculean task. They have no rights in the workplace, let alone anyone to defend them if they are being exploited.And it's not just women from the lower income group. Educated, financially independent women go through domestic abuse and violence at the hands of their so-called educated husbands. Is there a domestic violence hotline that women can call? Can they call the police? Societal mores in Pakistan have made it difficult for women to speak out.I'm marching because in the past one year of living here, I've seen and experienced enough. Women need to unite and support each other, instead of standing at the sidelines, looking away and hence perpetuating abusive, violent behavior that men are meting out to other women. Keeping silent means you are complicit too. Don't be a part of

جاتا ہے تو بھر پورحمایت کریں گے تاہم پیپلز پارٹی کی جانب سے اب تک رضاربانی کے نام پر حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا بلوچستان سے اٹھنے والی سینٹرز نے خواہش ظاہر کی ہے کہ اس طرح چیئرمین سینٹ کا انتخاب بلوچستان سے کیا جائے جس کے بعد سیاسی جماعتوں کی آپس میں رابطے بھی کئے تاہم اب گزشتہ روز سابق وزیراعظم میاں محمد نواز شریف زیر صدارت اتحادیوں کے اجلاس کے بعد نیشنل پارٹی کے مرکزی رہنما میر حاصل بزنجو کا پسندیدہ قرار دیا جا رہا ہے جن کو مسلم لیگ ن،پشتونخواہ ملی عوامی پارٹی اور جمعیت علما اسلام کی حمایت حاصل ہے۔ چیئرمین سینٹ کے لئے نیشنل پارٹی کے مرکزی رہنما میرحاصل بزنجو کو پسندہ قراردیا جارہا ہے جن کو پشتونخواہ ملی عوامی پارٹی ،جمعیت علما اسلام اور مسلم لیگ ن نے حمایت حاصل ہے سینٹ انتخابات کے بعد مرحلہ ہے چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینٹ کے انتخاب کا جس کے لئے ملک بڑی سیاسی جماعتیں پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے درمیان سخت مقابلہ متوقع ہے جبکہ تحریک انصاف سمیت دیگر جماعتیں بھی میدان میں ہے تاہم مسلم لیگ ن اوران کے اتحادیوں کا موقف ہے کہ اگر رضاربانی کا نام چیئر مین سینٹ کے لئے تجویزکیا جاتا ہے تو بھر پورحمایت کریں گے

Like Our Facebook Page

Latest News