February 20, 2018=National News

اربوں کی کرپشن۔۔شہباز شریف بری طرح پھنس گئے تین گواہوں نے منہ کھولتے ہوئے سب کچھ اگل دیا، نیب کو دستاویزی ثبوت بھی دیدئیے، تہلکہ خیز انکشافات سامنے آگئے

PESHAWAR: The provincial government suffered embarrassment in the Khyber Pakhtunkhwa Assembly on Monday for running the much-trumpeted KP Ehtesab Commission through an acting director general for the last two years against the law department’s opinion.Despite repeated calls of the opposition members for response about what they called illegal handover of the acting charge of the KPEC director general’s office to director retired brigadier Mohammad Sajjad, law minister Imtiaz Shahid opted not to respond insisting the matter is sub judice.Majority of the opposition members Nighat Orakzai of the PPP, Anisa Zeb Tahirkheli of the QWP, Shiraz Khan of the PML-N and other opposition lawmakers also came down hard on the government for not responding to the KPEC-related question.A pandemonium was also witnessed for some time in the house after PTI MPA Shaukat Yousafzai stood up for responding to the question.The opposition members later staged a walkout on the matter. They however returned after the government agreed to refer the matter to a special committee formed by the chair afterwards.On a point of order, ANP MPA Syed Jaffar Shah complained about the leak of a paper during the recent Provincial Public Service Commission examination for several higher posts of the local government department.The house also passed the Khyber (Amendment) Bill, 2018, the KP Public Procurement (

سرکاری کمپنیوں سے ہے اور یہ وہ لوگ ہیں جن کے پاس مختلف پروجیکٹ میں ٹھیکے تھے۔ گواہوں نے نیب کو اپنے بیانات ریکارڈ کرواتے ہوئے اربوں روپے کی لوٹ مار کا انکشاف کیا ہے جس کے بعد نیب کے ہاتھ بہت سے ثبوت آچکے ہیں ۔ چوہدری غلام حسین نے انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ جب وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نیب میں پیش ہوئے تھے تو انہوں نے ہر الزام کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ م کمپنیوں کے بورڈ آف ڈائریکٹرز ہیں، میرا کسی سے کوئی لینا دینا نہیں جب نیب افسران نے دیکھا کہ وزیراعلیٰ کو بات نہیں مان رہے تو انہوں نے ان کے سامنے وہاں ایک دستاویز رکھ دی اور پوچھا کہ اس پر دستخط کس کے ہیں؟وہ دستخط شہباز شریف کے تھے اور وہ دستاویز ایک کمپنی کا ٹھیکہ منسوخ کر کے دوسری کمپنی کو دینے کی منظوری سے متعلق تھی۔واضح رہے کہ پنجاب کی سرکاری کمپنیوں میں اربوں کی کرپشن سامنے آنے پر نیب نے وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کو طلب کیا تھا جہاں ان سے اس حوالے سے سوالات پوچھے گئے تھے۔

Like Our Facebook Page

Latest News