February 21, 2018=National News

آپ پریشان نہ ہو اب یہ ہماری ذمہ داری ہے‘‘بھارت اور سی پیک کی مخالف عالمی طاقتیں ہکا بکا رہ گئیں،چین نے خاموشی سے بلوچ علیحدگی پسندوں کو راضی کر لیا،پاکستان کا بڑا مسئلہ حل کردیا، برطانوی اخبار کا تہلکہ خیز انکشاف

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)چین اور بلوچ علیحدگی پسندوں کے درمیان پانچ سال سے خفیہ مذاکرات جاری،بلوچ جنگجو سی پیک کے لیے اب خطرہ نہیں رہے، چینی سفیر کا برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کو انٹرویو میں اظہار خیال ، برطانوی اخبار نے پاکستانی افسر کے حوالے سے بھی چین اور بلوچ جنگجوئوں میں مذاکرات کی تصدیق کر دی، تہلکہ خیز انکشافات۔ تفصیلات کے مطابقبرطانوی اخبار فنانشل ٹائمز نے انکشاف کیا ہے کہ چین اور بلوچ علیحدگی پسندوں کے درمیان پانچ سال سے خفیہ مذاکرات جاری ہیں ۔ فنانشل ٹائمز نے تین باخبر ذرائع کے حوالے سے اپنی رپورٹ میں کہا

ے کہ چین اور بلوچ علیحدگی پسندوں میں 5سال سے مذاکرات جاری ہیں ، چینی حکومت کابلوچ علیحدگی پسندوں سے خفیہ مذاکرات کا مقصدپاک چین اقتصادی راہداری منصوبوں کو تحفظ دینا ہے۔ اخبار نے ایک پاکستانی افسر کے حوالے سے بتایا ہے کہ پاکستانی افسر نے اخبار سے گفتگو میں انکشاف کیا ہے کہ چین نے اس حوالے سے خاموشی سے بہت پیش رفت کرلی ہے، بلوچ علیحدگی پسند کبھی کبھار حملے کرنے کی کوشش کرتے رہتے ہیں تاہم ان کی جانب سے کوئی بھرپور اور بڑی کارروائی نہیں کی جارہی۔پاکستانی حکام ان مذاکرات کی تفصیلات سے لاعلم ہیں لیکن انہوں نے چینی سفارتکاروں اور بلوچ باغیوں کے درمیان بات چیت کا خیرمقدم کیا ہے۔ اسلام آباد میں ایک افسر نے کہا کہ آخرکار بلوچستان میں امن قائم ہونے کا فائدہ دونوں کو ہی ہوگا۔ ایک اور افسر نے کہا کہ امریکا کی جانب سے پاکستان کی فوجی امداد معطل ہونے کی وجہ سے حکام بالا اس نتیجے میں پہنچے ہیں کہ چین زیادہ قابل بھروسہ ساتھی ہے۔ چینی ہمارے مدد کے لیے یہاں موجود ہیں جب کہ امریکا ناقابل بھروسہ ہے۔پاکستان میں چینی سفیر نے حال ہی میں بی بی سی کو انٹرویو میں یہ بات کہی تھی کہبلوچ جنگجو سی پیک کے لیے اب خطرہ نہیں رہے۔ایک قبائلی سربراہ نے بتایا کہ بہت سے نوجوانوں کو مالی مراعات دے کر ہتھیار ڈالنے پر آمادہ کیا جارہا ہے، اب علیحدگی پسند تحریک میں شمولیت کی 10 سال پہلے جیسی کشش نہیں رہی، بہت سے لوگ سی پیک کو خوشحالی کا زینہ سمجھنے لگے ہیں۔اخبار کی رپورٹ مین انکشاف کیا گیا ہے کہ افغان سرحد کی نگرانی کیلئے بھی چین پاکستان کوبھرپور معاونت اور امداد فراہم کر رہا ہے اور اس سلسلے میں پاکستان ڈرونز کے پرزہ جات اور فوجی ہیلی کاپٹر بھی چین سے خریدنے پر غور کررہا ہے۔رپورٹ میں مزید انکشاف کیا گیا ہے کہ چین نہ صرف جنوبی ایشیا بلکہ دنیا کے دوسرے خطوں میں اپنی معیشت کو ترقی دینے کے منصوبے پر کام کر رہا ہے جس میں دنیا کے انتہائی متنازع خطے شامل ہیں۔ جنوبی سوڈان جہاں چینی حکومتتیل کے شعبے اور ریلوے لائن کی تعمیر میں سرمایہ کاری کررہی ہےچینی امن فوج تعینات ہے جبکہ چین نے عراق میں داعش کے خلاف بھی آپریشن کا عندیہ دیدیا ہےجس کی وجہ یہ ہے کہ چین عراق میں تیل کے شعبے میں سب سے بڑے غیر ملکی سرمایہ کار ملک کے طور پر سامنے آیا ہے۔

Like Our Facebook Page

Latest News